Kashaf Gondal Poetry

اداس آنکهیں اداس چہرہ
دل پہ چهایا اداسی کا پہرہ
ماضی کا سوچ کر چمکیں آنکهیں
کہ ماضی لگے بے حد سنہرا
وہ پریوں کی باتیں، وہ جگنو بهری راتیں
وہ من موجی دنیا، وہ پهولوں کا سہرا

جو کل کا سوچوں تو کل اک خواب ٹہرا
کہ ننهی سی جان میں حوصلہ گہرا
وہ دنیا بدلنا وہ بادلوں پر چلنا
وہ ستاروں کا آنکهوں میں اتر کر چمکنا
وہ جوشیلا خون جذبوں کو تولے
وہ دل میں بھڑکتے جنوں کے شعلے
بلند ارادے پر عزم چہرہ

مسئلہ سارا حال میں ٹھہرا
بے حال کرتا زخم گہرا
یہ قید پنچھی یہ زرد پتے
یہ اجاڑ درختوں پہ پنجرے لٹکتے
یہ محبتوں کے چکر یہ دل ہوئے پتهر
یہ سترہ میں بهی مسافتیں کہیں ستر
یہ کالی آنکهیں یہ سیاہ من
ہر بار پونچهے اشک دامن
اداس صبحیں اداس شامیں
میں کیا جانوں کہ ہوں کہا میں
اداس آنکھیں اداس چہرہ
دل پہ چهایا اداسی کا پہرہ

٭٭٭٭٭


کشف گوندل

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*